اہل بیت اطہار کی چیلم سیدالشدا پر کربلا آمد

اہلِ بیت اطہارؑکی_چہلم

سیدالشہداءؑپرکربلا_آمد

واقعہ کربلا کے ایک سال بعد تک یزید ملعون نے
حضور پاک صل اللّہ علیہ وسلم کے گھرانے کو قید رکھا
امام حسین علیہ السلام کی بیٹی

جنابِ سکینہ سلام اللّہ علیہ کی شہادت کے بعد بغاوت کے نتیجے میں اسیروں کو رہا کیا گیا رہائی کے بعد

امام علی علیہ_السلام کی بیٹی

بی زینب سلام اللّہ_علیہ قافلے کے ساتھ کربلا میں

( 20 صفر)کو تشریف لائیں اور
امام حسین علیہ السلام کا چہلم(اربعین) منایا

اہلِ بیت اطہار علیہم السلام کا قافلہ جب ایک ایسے مقام پر پہنچا جہاں دو راستے نکلتے تھے – ایک کربلا کی طرف جاتا تھا اور ایک مدینہ کی طرف جاتا تھا – اس وقت مستورات اور دکھی ماؤں ، بہنوں ، بیٹیوں کو اپنے اپنے شہداء کی قبروں کی زیارت کا بہت اشتیاق تھا – اس لئے گریہ و زاری شرو ہو گئی اور نعمان سے کہا گیا :

خدا کی قسم !
ہمیں کربلا کے راستے لے جاؤ تاکہ اپنے عزیزوں کی قبروں کی زیارت کر لیں اور جو اس سفر میں ہمارے اوپر مصائب آۓ ہیں وہ بھی قبر امام حسین علیہ السلام پر بیان کر لیں نعمان نے قبول کیا اور ان کے فرمانے پر عمل کیا – اس کاروان کو کربلا کے راستے پر جانے کا حکم دیا – جوں جوں قافلہ کربلا کے قریب جا رہا تھا ، ہر بی بی کے دل میں اپنے عزیزوں کی قبور کی زیارت شوق کی آگ شعلہ ور ہو رہی تھی یہاں تک کہ سید الشہداء امام حسین علیہ السلام کی تربت کی خوشبو بہنوں اور بیٹیوں کے مسام جان تک پہنچی تو وہ ببل کی طرح ہو گئیں کہ جو پھول کی خوشبو سونگھتی ہے تو فرط محبت سے نڈھال ہو جاتی ہے – جب بیبیوں کے مسام میں تربت حسین علیہ السلام کی خوشبو پہنچی تو وہ فرط مہیبت اور شدت _غم سے مرثیہ پڑھنے لگیں –

حیات زینب کی زبان حال یہ تھی :

اے بھائی ! آپ کے بعد میں نے بہت دکھہ دیکھے اور مجھے بہت سے شہروں اور گلیوں میں پھرایا گیا – مجھے خود اس قدر حوصلے اور صبر کی امید نہ تھی کہ آپ کے بغیر کربلا سے شام تک پہنچ سکوں گی لیکن خدا نے حوصلہ دیا – کربلا کے بعد جب پہلی دفعہ کوفہ میں آپ کے سر پر نظر پڑی تو میں نے فرط غم سے اپنی پیشانی کو محمل کی لکڑی پر دے مارا – بھائی ! ہمیں کوفہ و شام کے بازاروں میں ننگے سر اور ننگے پاؤں پھرایا گیا اور ہم نے نا محرموں کی موجودگی کے سبب سر کو شرم سے جھکا لیا – جب یزید کے دربار میں بازو بندھے ہوۓ پیش ہوئی تو کئی مرتبہ خدا سے موت مانگی لیکن ان دکھوں کے باوجود میں اس بات پر مطمئن ہوں کہ اپنی نقد جاں بیچ کر آپ کا غم خرید لیا ہے –

{ مدینہ سے مدینہ تک ، صفحہ_٥٦٢ }

عالمی روحانی تحریک
انجمن سرفروشان اسلام(رجسٹرڈ)پاکستان