علی والے جہاں بیٹھے ، وھی جنّت بنا بیٹھے..

فقیروں کا بھی کیا ، چاھے جہاں بستی بسا بیٹھے
علی والے جہاں بیٹھے ، وھی جنّت بنا بیٹھے..

فرازِ دار ھو ، مقتل ھو ، زنداں ھو کہ صحرا ھو
جلی عشق علی کی شمع اور پروانے آ بیٹھے..

کوئی موسم ، کوئی بھی وقت ، کوئی بھی علاقہ ھو
جہاں ذکرِ علی چھیڑا ، وہاں دیوانے آ بیٹھے..